fbpx
خبریں

چین: میراتھن ریس میں مسلسل سگریٹ نوشی پر دو سالہ پابندی

چین میں میراتھن کے دوران مسلسل سگریٹ نوشی کرنے والے 52 سالہ چینی شہری پر دو سال کی پابندی عائد کر دی گئی۔

مذکورہ شخص نے، جن کی شناخت چن کی عرفیت سے ہوئی، سات جنوری کو تین گھنٹے 33 منٹ میں سی اینڈ ڈی ژیامن میراتھن 2024 مکمل کی اور اس دوران وہ مسلسل سگریٹ پیتے رہے۔

 

اب ژیامن میراتھن کی آرگنائزنگ کمیٹی نے ان کے دوڑ میں حصہ لینے پر دو سال کی پابندی عائد کرتے ہوئے ان پر مزید جرمانے کے لیے چائنیز ایتھلیٹکس ایسوسی ایشن کو رپورٹ کیا ہے۔

 

آرگنائزنگ کمیٹی کے بیان میں کہا گیا کہ اس نے ’دوڑ کی نگرانی، ریفری رپورٹس، ٹائمنگ چپ ڈیٹا، ریس کی ویڈیوز، تصاویر اور دیگر مواد‘ کی بنیاد پر چن کی تمباکو نوشی کی تصدیق کی۔ کمیٹی نے ایونٹ میں ان کے وقت اور درجہ بندی کو منسوخ کر دیا۔

کینیڈین رننگ میگزین کے مطابق وہ انکل چن کے نام سے مشہور ہیں اور انہوں نے چین میں ’سموکنگ برادر‘ کا لقب حاصل رکھا ہے۔

اطلاعات کے مطابق چن نے 2022 میں میراتھن کے دوران بھی سگریٹ نوشی کی۔ انہیں نومبر 2022 میں صوبہ ژی جیانگ کے علاقے جیانڈ میں شینان جیانگ میں میراتھن کے دوران تمباکو نوشی کرتے ہوئے دیکھا گیا۔ وہ 1500 سے زائد رنرز میں سے 574 ویں نمبر پر رہے۔

 

میراتھن میں حصہ لیتے ہوئے چن کی سگریٹ نوشی کی تصاویر سوشل میڈیا پر وائرل ہو گئیں اور انہیں میڈیا میں کافی کوریج ملی۔

ژیامن میراتھن نے اپنی ویب سائٹ پر تمباکو نوشی کو ’(قابل سزا) غیر مہذب افعال‘ میں سے ایک کے طور پر درج کر رکھا ہے۔

اس فہرست میں ’سرعام رفع حاجت، کچرا پھینکنا، پھولوں اور گھاس کو کچلنا اور دیگر رویے بھی شامل ہیں، جو دوڑ میں شریک دوسرے لوگوں کو متاثر کر سکتے ہیں۔‘

چین کے دیگر شہروں نے میراتھن کے دوران تمباکو نوشی کے مسئلے کو ’غیرمہذب رویے‘ کے قواعد کے تحت دیکھنا شروع کر دیا ہے۔

اس سیکشن میں متعلقہ حوالہ پوائنٹس شامل ہیں (Related Nodes field)

سنگاپور سے تعلق رکھنے والے آئرن مین گروپ نے، جو سٹینڈرڈ چارٹرڈ سنگاپور میراتھن کا اہتمام کرتا ہے، اخبار سٹریٹ ٹائمز کو بتایا: ’ہمارے رنرز عام طور پر مہذب سوچ کے مالک ہوتے ہیں اور اس بات کو یقینی بنانے میں اپنا کردار ادا کرتے ہیں کہ دوڑ اس میں شامل افراد کے لیے خوشگوار تجربہ ہو۔‘

’سنگاپور میں ایک شہر کے طور پر پہلے سے ہی واضح قواعد و ضوابط موجود ہیں اور دوڑ کے ہمارے شرکا ان ہدایات پر عمل کرتے ہیں۔‘

گذشتہ سال چینی ایتھلیٹکس ایسوسی ایشن نے تجویز پیش کی تھی جس کا مقصد دوڑ میں صحت مند انداز میں شرکت کی حوصلہ افزائی کرنا اور سڑک پر دوڑنے کے مقابلوں کے دوران تمباکو نوشی کو کم کرنا تھا۔

تجویز میں کہا گیا کہ نئے قوانین پر عمل نہ کرنے والوں کو دوڑوں میں حصہ لینے سے نااہل قرار دیا جائے گا۔

2018  کے گوانگ ژیامن میراتھن اور 2019 کے ژیامن میراتھن کے دوران چن کی دوڑتے ہوئے سگریٹ نوشی کی تصاویر منظر عام پر آئیں۔

وہ میراتھن میں حصہ لینے والے ایک شاندار ایتھلیٹ بھی ہیں جنہوں نے 50 کلومیٹر سے 12 گھنٹے تک کے فاصلے کے مقابلوں میں کامیابی سے حصہ لیا۔

مستند خبروں اور حالات حاضرہ کے تجزیوں کے لیے انڈپینڈنٹ اردو کے وٹس ایپ چینل میں شامل ہونے کے لیے یہاں کلک کریں۔




Source link

Facebook Comments

رائے دیں

Back to top button