fbpx
اُردو شاعریغزل

بابل رے توری بنتی کروں ہوں (غزل)

شہزاد نیر

غزل

بابل رے توری بنتی کروں ہوں، کان لگا کر سُن
دل کی بات بہت مدّھم ہے، دھیان لگا کر سُن

آنکھیں جس کی چاہ کریں بس وہ مجھے چُھونے پائے
میں جس ھاتھ کو جانوں ناھیں کبھی نہ مجھ تک آئے

موہ پریت کا بھوجن مورا اور کوئی نہ کھائے
تھالی اُس کے آگے رکھوں جو مورے من بھائے

بابل تجھ سے پھول نہ مانگوں پھول کی باس اُڑ جائے
پیارے پی کا پیار دلا دے کبھی نہ جو کملائے

بابل تجھ سے دھیج نہ مانگوں، مانگوں ایک نیائے
من بھاون مورا گھونگھٹ کھولے، من بھاون لے جائے

شہزاد نیر

Facebook Comments

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button